Hindusthan Samachar
Banner 2 सोमवार, नवम्बर 19, 2018 | समय 00:05 Hrs(IST) Sonali Sonali Sonali Singh Bisht

نوٹ بندی، جی ایس ٹی سے ملک کی معیشت متزلزل ہو ئی:رگھو رام راجن

By HindusthanSamachar | Publish Date: Nov 10 2018 7:51PM
نوٹ بندی، جی ایس ٹی سے ملک کی معیشت متزلزل ہو ئی:رگھو رام راجن
واشنگٹن،10نومبر(ہ س)۔ بھارتی ریزرو بینک ( آر بی آئی ) کے سابق گورنر رگھو رام راجن نے کہا ہے کہ نوٹ بندی اور اشیا و خدمات ٹیکس ( جی ایس ٹی ) کی وجہ سے گزشتہ سال بھارت کی اقتصادی ترقی کی شرح میں کمی آئی۔ انہوں نے زور دیتے ہوئے کہا کہ موجودہ سات فیصد کی شرح کی ترقی ملک کی ضروریات کے لئے کافی نہیں ہے۔ برکلے میں یونیورسٹی آف کیلیفورنیا میں جمعہ کو لوگوں سے خطاب کرتے ہوئے راجن نے کہا کہ نوٹ بندی اور جی ایس ٹی نافذ ہونے سے پہلے چار سال (2012 سے 2016) تک بھارت کی ترقی کی شرح کی رفتار کافی تیز رہی۔فیوچر آف انڈیا پر دوسرا بھٹاچاریہ لیکچر دیتے ہوئے انہوں نے کہا، ''نوٹ بندی اور جی ایس ٹی جیسے مسلسل دو جھٹکوں نے ہندوستان کی ترقی کی شرح پر سنگین اثر ڈالا۔بھارت کی معاشی ترقی کی شرح ایسے وقت میں گر گئی، جب عالمی معیشت ترقی پرتھی۔ '' راجن نے کہا، ''2017 میں ایسا ہوا کہ جب پوری دنیا آگے بڑھ رہی تھی، تب بھارت پیچھے جا رہا تھا۔ یہ اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ ان دونوں (نوٹ بندی اور جی ایس ٹی) کا اثر معیشت پر ہوا۔ این پی اے پر تنقید کرتے ہوئے رگھو رام راجن نے کہاکہ ایسی صورت میں کرنے کے لے سب سے اچھا کام یہ ہےکہ صاف کریں۔ بری چیزوں سے نمٹا ضروری ہے تاکہ صاف بیلنس شیٹ کے ساتھ بینکوں کو ٹریک پر واپس لایا جا سکے ۔ راجن نے کہا کہ بھارت نے بینکوں کو کلین اپ کے ئے کافی وقت لگے گا کیونکہ سسٹم میںخراب لوگ سے نمٹنے کے لئے کوئی ضابطہ نہیں ہے ۔واضح رہے کہ نیتی آیوگ نے اقتصادی مندی کے لئے راجن کی پالیسیوں کو ذمہ دار بتایا تھا۔ رگھو رام راجن نے مزید کہا کہ اپنی توانائی کی ضروریات کے لئے تیل کی درآمد پر بھارت کے انحصار کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بھارت کی ترقی کی شرح ایک بار پھر رفتار پکڑ رہی ہے، ایسے میں تیل کی قیمتیں اس کے لئے ایک رکاوٹ ہیں۔ بڑھتی ہوئی تیل کی قیمتوں پر راجن نے کہا کہ ہندوستانی معیشت کے لئے چیزیں تھوڑی مشکل ہونے جا رہی ہیں۔سابق گورنر نے مزید کہا کہ کہ بھارت میں ترقی کی بے پناہ صلاحیت ہے۔جیسا کہ ابھی سات فیصد ترقی کی شرح دیکھی جا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر ترقی کی شرح سات فیصد سے نیچے جاتی ہے تو، ہمیں دیکھنا ہوگا کہ ہم سے کچھ غلطی ہو رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ بنیاد ہے، جس پر بھارت کو کم از کم اگلے 10-15 سال تک ترقی کرنا ہے۔ راجن نے کہا کہ موجودہ وقت میں ملک تین اہم مسائل کا سامنا کر رہاہے۔ پہلا انفراسٹرکچر ہے جو ابتدائی سطح پر معیشت کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔ دوسرا، بجلی کے شعبے کی رکاوٹوں کو دور کرنے کے لئے مختصر مدت کے پالیسی بننا چاہئے، تاکہ بجلی واقعی ان لوگوں تک پہنچے، جنہیں اس کی ضرورت ہے۔ تیسری اہم رکاوٹ بینکوں کا این پی اے ہے۔ ان مسائل سے ملک کو نکلنا ضروری ہے ۔ ہندوستھان سماچارعطا
image